Saturday , April 17 2021

وسط جولائی تک بھارت چار رافیل طیارے حاصل کر لے گا، چین اور پاکستان کے لیے خطرے کی گھنٹی

مظفر جنگ

پہلے چار رافیل فائٹ ائیرکرافٹس کی فراہمی مئی کے آخر تک فرانس سے پہنچنے والی تھی لیکن کورونا وائرس کے پھیلنے کی وجہ سے اسے دو ماہ کے لئے ملتوی کردیا گیا تھا۔ مبینہ طور پر ہوائی جہازوں کا مقابلہ چین اور پاکستان نہیں کر سکتے ہیں۔

بھارتی دفاعی ذرائع کے مطابق : “پہلے چار ہوائی جہاز جن میں تین جڑواں سیٹر ٹرینر ہوائی جہاز اور ایک سنگل سیٹر لڑاکا طیارے شامل تھے ، جولائی کے آخر میں امبالا ایئر بیس پر پہنچنا شروع ہوجائیں گے.

ایئر فورس کے چیف آر کے ایس بھڈوریا کے اعزاز میں ٹرینرز کے پاس آر بی سیریز کے دم نمبر ہوں گے جنہوں نے 36 رافیل جنگی ہوائی جہازوں کے لئے ہندوستان کے سب سے بڑے دفاعی معاہدے کو حتمی شکل دینے میں اہم کردار ادا کیا تھا۔

17 گولڈن ایروس اسکواڈرن کا کمانڈنگ آفیسر فرانس کے پائلٹ کے ساتھ پہلا طیارہ اڑانے کے لئے تیار ہیں۔

اطلاعات کے مطابق ، فرانس سے ہندوستان جانے والی پرواز کے دوران ، وہ مشرق وسطی میں رکنے سے پہلے ایک فرانسیسی ایئر فورس کے ٹینکر طیارے میں ایندھن کے لئے رک جائے گا۔

سات ہندوستانی پائلٹوں نے پہلے ہی ایک فرانسیسی ایئر بیس پر اپنی تربیت مکمل کرلی ہے جبکہ ایک اور گروپ فرانس کے ایک روزہ تربیت کے لئے سفر کرے گا جب ایک بار پھر دونوں ممالک میں مہلک کورونا وائرس کا خطرہ کم ہوجائے گا۔

سنہ 2016 میں ، ہندوستان نے ہندوستانی فضائیہ کی ہنگامی ضروریات کو پورا کرنے کے لئے فرانس کے ساتھ 36 رافلز کے لئے 60،000 کروڑ روپے (653.15 ڈالر) سے زیادہ کے معاہدے پر دستخط کیے تھے۔

ہندوستان میں مانیٹری کے حوالے سے یہ اب تک کا سب سے بڑا معاملہ ہے اور ایئر چیف مارشل بھڈوریا اس معاہدے کے لئے مذاکراتی ٹیم کے سربراہ ہیں۔
نئے لڑاکا طیارے ایک لمبی دوری کے میٹور ایئر ٹو ایئر میزائل اور ایس سی اے ایل پی سے لیس ہیں

یہ اطلاع ہے کہ ، ہوا سے ہوا اور ہوا سے زمینی میزئلوں سے لیس رافیل کا مقابلہ چین اور پاکستان دونوں نہیں کرسکتے۔

مظفر علی جنگ ایک سینئر صحافی، مورخ اور تجزیہ نگار ہیں. وہ عرصہ بیس سال سے اردو اور انگریزی اخبارات اور رسائل کے لیے لکھ رہے ہیں. ان سے اس ای میل پر رابطہ کیا جا سکتا ہے
muzaffar56@gmail.com


About

Leave Comment

Skip to toolbar